انار کا دانہ ترش ہے

ارے بھئی اماں دیکھوں یہ بھی انار دانہ بھی ترش ہے . آدمی نے انار کا دانہ ہلکا سا چکا اور بڑی بی کو پکڑایا .. نہیں‌یہ تو میٹھا ہے . بڑی بی نے کہا . اس آدمی نے آدھے سے زیادہ انار کے دانے چکوانے کے بعد پیسے ادا کئے اور چل دیا . یہ اس کا روز کا معمول تھا ایک دن بیوی نے پوچھ ہی لیا . دانے تو سارے میٹھے ہوتے ہیں پھر بڑی بی کو کیوں‌تنگ کرتے ہو،. شوہر بولا

:وہ بوڑھی ماں میٹھے انار ہی بیچتی ہیں مگر غربت کی وجہ سے وہ خود اس کو کھانے سے محروم ہیں …اس ترکیب سے میں ان کو ایک انار بلا کسی قیمت کے کھلانے میں کامیاب ہو جا تا ہوں …بس اتنی سی بات ہے”اس بوڑھی عورت کے سامنے ایک سبزی فروش عورت روزانہ یہ تماشہ دیکھتی تھی …… سو وہ ایک دن پوچھ بیٹھی “یہ آدمی روزانہ تمہارے انار میں نقص نکال

دیتا ہے اور تم ہو کہ ہمیشہ ایک زائد انار وزن کرتی ہو…کیا وجہ ہے؟؟؟”یہ سن کے بوڑھی عورت کے لبوں پر مسکراھٹ کھیل گئی اور وہ گویا ہوئی “میں جانتی ہو ں کہ وہ ایسا مجھے ایک انار کھلانے کے لیے کرتا ہے اور وہ یہ سوچ بیٹھا ہے کہ میں اس سے بیگانہ ہوں، میں کبھی زیادہ وزن نہیں کرتی … یہ تو اسکی محبت ہے جو ترازو کے پلے کو بوجھل کر دیتی ہے” .محبت

اور احترام کی مسرتیں ان چھوٹے چھوٹهے میٹھے دانو ں میں پنہاں ہیں …. سچ ہے کہ محبت کا صلہ بھی محبت ہے…!!

اپنا تبصرہ بھیجیں